Riazuddin: The Self-Effacing Quintessential Physicist of Pakistan


IT WAS tumultuous 1947 when the world observed the violent partition of India. Bloodthirsty savages put up communal riots all over the country. Religiously divided Ludhiana was also engulfed. Meanwhile, a lower middle-class family left the city for good and migrated to the newly established Pakistan. There were 17 years old twins in the family, Riazuddin and Fayyazuddin, who schooled in Islamia High School ran by Anjuman-i-Islamia philanthropy. Their inquisitiveness and appetite for knowledge were out of bounds. It was an ultimate sign of their dedication towards the beloved homeland that after losing all material possession in migration, they didn’t bemoan but ready to construe dreams with the hope of bright future. So the family enrolled the children in Government Muhammadan Oriental (MAO) College but soon got admission in Government College Lahore (now Government College University, Lahore) in 1949.

Source: King Fahd University of Petroleum and Minerals

In Government College Lahore, they started studying engineering but they couldn’t make their way spectacular and stunning. So a teacher there suggested them to study physics rather than engineering. Riazuddin gave his assent. Although it was quite disturbing and uninteresting situation for Riazuddin yet it was the outset of a celebrated career in the cosmos of physics. It was Government College Lahore, where Riazuddin met with his mentor Abdus Salam, in 1951. Salam’s sharp-witted personality and perspicacity to deal with theories in physics made him the rising star in the physics community all over the world. It was not only Riazuddin but the nations who spurred by Salam. After declining the offer of professorship at Cambridge, Salam joined Government College, Lahore and at the same time, he started a new course of Quantum Mechanics in Punjab University, Lahore. It was Salam’s repute who drew the attention of students. But only Riazuddin and Fayyazuddin got success in surviving the thicket of mathematical equations involved in quantum mechanics. Although it was a disheartened experience for Salam yet the twins made their identification as best students in that course.

Riazuddin got his Master’s degree in mathematics from Government College Lahore under the mentorship of Abdus Salam and joined his alma mater in 1954 as a lecturer in mathematics. Riazuddin left for Cambridge in 1955 on the invitation of Dr. Abdus Salam to pursue his doctorate under his supervision. His dissertation entitled Charge Radius of Pion got published in Physical Review Letters on May 15, 1959. It dealt with certain regularities underlying nuclear forces. It was an influential research paper but something more outstanding was yet to come.

After his return to Pakistan in 1959, he joined Punjab University Lahore as an associate professor of mathematics. In 1963, Norman March and Michael Duff awarded him a fellowship in the United States and he became a research associate professor at University of Rochester. He stayed there until 1965. His stay extended there and in 1965, he joined the University of Pennsylvania to teach physics until 1966. Meantime, his brother Fayyazuddin also completed his doctorate on “Preliminary Analysis of Photoproduction of K Mesons in the Mandelstam Representation”. On his way to University of Chicago’s Enrico Fermi Institute, Riazuddin convened his brother along with Faheem Hussain (late)* in Illinois. In 1966, Riazuddin and Fayyazuddin published an authoritative research paper entitled “Algebra of Current Components and Decay Widths of ρ and K* Mesons” in PhysicalReview Letters on July 29, 1966. It is the widely used Kawarabayashi-Suzuki-Riazuddin-Fayyazuddin (KSRF) relation. Actually, this fruitful relation was separately derived by Japanese scientists Ken Kawarabayashi and Mahiko Suzuki and Pakistani twin scientists Riazuddin and Fayyazuddin. According to Pervez Hoodbhoy, “The Relation (KSRF) has stood the test of experiment, but even today continues to tantalize physicists—because it works so much better than it really should”.

           Riazuddin found 1968, an efficacious year, for him. He came back to Pakistan on the request of Abdus Salam and joined Quaid-e-Azam University Islamabad’s Institute of Physics (now National Centre for Physics). Vibrant research groups on relativity, particle physics, and string theory were brought about in those days. On Salam’s postulation, Enrico Fermi Institute had also engaged its scientists in such groups. It was the start of an entirely new epoch in the field of physics in Pakistan. But still there is one more thing was to come into being on the part of Riazuddin in 1969, which made him acknowledged all over the world. It was his classical and well-founded textbook in particle physics Theory of Weak Interactions in Particle Physics coauthored with C. P. Ryan and Robert E. Marshak. He also penned two widely recognized textbooks, together with Fayyazuddin, Quantum Mechanics in 1990 and A Modern Introduction to Particle Physics in 1992.

Source: Amazon
Salam’s relation with Riazuddin was lenient and unparalleled. Two nonpareil physicists of the homeland enthralled the physicists of all castes and creeds all over the world. International Centre for Theoretical Physics (ICTP) Trieste, Italy shortly after its establishment became world’s leading cornerstone research institute. Riazuddin, along with Salam’s other students, created theoretical physics group there.

Astonishingly, it was ICTP, where Salam summoned Riazuddin and advised him to meet Munir Ahmed Khan upon his return to Pakistan to start the progress for the designing of the atomic bomb. In Salam’s views, the creation of theoretical physics group in Pakistan was mandatary to explore the technical aspects of fissile core and triggering mechanics of fissile material. Riazuddin made himself busy in the collection and analysis of data, which he procured from research papers, Manhattan project, Los Alamos laboratory etc. and started working day and night with sagacious engineers and canny physicists. Now, the rest was history. By shrugging off conspiracies, Pakistan made its way towards success. There was mass jubilation on May 28, 1998.


Source: Pakistan Science Club
Overlooking minute details, in my opinion, the nation has forgotten the man who adept at complex calculations involved in the set-up of a nuclear arsenal. Riazuddin played a seminal and catalytic role, on the advice of Abdus Salam, in Pakistan’s nuclear program. He awarded with Hilal-i-Imtiaz by the Government of Pakistan but it can never be the meed of Riazuddin’s diligence.

           Once Riazuddin dreamt that he would transform and develop National Centre for Physics on the lines of ICTP. He became the director of NCP but unluckily owing to administrative and political reasons, he could not have expounded his dream and removed by authorities from the directorship of NCP.

Riazuddin remained in search of something new. He wanted to find modern ways to look at. Being a dignified professor, it was his commitment and passion which made him the great Riazuddin. He knew how to evolve in the essence of theoretical physics. Around 165 research papers in reputed journals all over the world, more than 1900 citations along with a number of books, Riazuddin became one of the ever-leading physicists of the country.

One can easily recognize his thirst for knowledge by the fact that this self-effacing quintessential physicist published his last paper on August 20, 2013 at the age of 82 just 29 days before his demise. On September 9, 2013, this archetypal scientist took his last breath but had left an unexampled legacy. Motherland produced only a handful of physicists like Riazuddin who have exceptional advocacy and subservient innovation. He left this materialistic world but his affection and services will remain forever with us.

Source: National Centre for Physics
Riazuddin made us proud. We cannot pay his debt for the services, he offered for us. But we can tribute to his intentness by following his footsteps with great zeal, glorious knack, coherent allegiance and continuous hard work.

He often said that “It was the idealism of the youth which not only enabled many of us, who could have stayed abroad, to return, but also infused a great enthusiasm to succeed in the pioneering role of establishing a new institution from scratch”.

(* Faheem Hussain was recently awarded Spirit of Abdus Salam Award (2016) along with Seifallah Randjbar-Daemi and Galileo Violini by The Abdus Salam International Centre for Theoretical Physics (ICTP) Trieste, Italy.)

References:
  1. The Man Who Designed Pakistan’sBomb by Pervez Hoodbhoy, Newsweek. 
  2. Riazuddin by M. Zafar Iqbal 
  3. Riazuddin: In Memoriam by Asghar Qadir
Muhammad Bilal Azam


عید 'اپنوں' کے ساتھ

صبح سویرے شبنم کی روپہلی بوندوں کا لمس پا کر سرکاری ٹی وی کے کارٹون دیکھ کر ماں کی دعاؤں کے سائے میں  باپ کی انگلی پکڑے اسکول جانے والے بچے نجانے اتنے بڑے کب سے ہو گئے کہ ماں باپ کی آسائشوں کا خیال نہ رکھ پائیں! دوپہر کو سکول سے واپسی پر اگر ماں نظر نہ آتی یا رات کو کام کا بوجھ لئے باپ کبھی دیر سے گھر آتا تو اندیشوں میں گھِر جانے والے بچے شعور کی سیڑھی کو ایسے عبور کر گئے کہ پھر سالوں ماں باپ کی شکل بھی نہیں دیکھی۔ سکول سے تھکے ہارے واپس آ کر ماں کے ہاتھ سے کھانا کھانے کی شرط لگاتے بچے شاید دنیا کے جھمیلوں میں اس قدر مصروف ہوئے کہ ماں باپ کے لئے دو وقت کی روٹی کا بند و بست بھی مشکل ہو گیا۔ کبھی صبح سویرے گھر کی چھت پہ دانا چگتے چوزے اچھے لگتے تھے کہ ان سے اپنائیت کا احساس ہوتا تھا مگر پھر نہ وہ چوزے رہتے ہیں نہ وہ اپنائیت۔

منظر بدلتا ہے اور چوزوں کو دانہ چگتے دیکھ کر خوش ہونے والے بچوں کو کہیں یتیمی کا داغ لگ جاتا ہے تو  کہیں فکرِ معاش کھلونے توڑ دیتی ہے۔ کبھی وہ  بوٹ پالش کرتے نظر آتے ہیں تو کبھی برتن دھوتے ہوئے۔ رنگ تو رنگ ان آنکھوں سے تو خواب بھی مٹتے جاتے ہیں۔ دوستوں کے ساتھ نئے کپڑے پہن کر  عید منانے کی خواہش زندگی کی بے رحم ضروریات تلے کہیں دب جاتی ہے۔ یہاں شماریات کا محل نہیں کہ رزق کی تلاش میں نکلے ہوئے ایک بچے کی آہ بھی تمام قوم کی عشرت و آسائش پہ بھاری ہے۔

بھوک چہروں پہ لئے چاند سے پیارے بچے
بیچتے پھرتے ہیں گلیوں میں غبارے بچے
کیا بھروسہ ہے سمندر کا، خدا خیر کرے
سیپیاں چننے گئے ہیں مرے سارے بچے

اب نہ سرخ پانی کا عذاب آئے گا، نہ ٹڈی دل چھوڑے جائیں گے کہ اب دلوں پہ مہر لگتی جا رہی ہے۔ بے حسی عذابِ الٰہی ہے۔۔۔ بے حسی عذابِ الٰہی ہے۔۔۔  اور اس سے بڑھ کر بے حسی کیا ہو گی کہ جنت اولڈ ہومز میں خود اپنے مکینوں کا، اپنے راج دلاروں کا رستہ تک رہی ہے۔ بے قیاس  و ناشناس لوگوں کے ہجوم میں بچوں کی اداس آنکھیں سراپا سوال ہیں۔۔۔

گھر تو کیا، گھر کی شباہت بھی نہیں ہے باقی
ایسے ویران ہوئے ہیں در و دیوار کہ بس

کتنی آنکھیں ایسی ہیں جو اولڈ ہومز میں اپنے پیاروں کے، اپنے بیٹوں، بیٹیوں کے آنے کی آس لگائے دھندلا جائیں گی مگر آنے والے نہیں آئیں گے! بابا ماضی کے سفر پہ نکل جائیں گے اور کس دل کے ساتھ تصور میں لائیں گے کہ کاش میرا بیٹا آئے، جیسے بچپن میں مَیں اس کی انگلی پکڑے سکول لے جاتا تھا، وہ مجھے گھر لے جائے! ماں اب بھی رات کو اولڈ ہوم کے دروازے پہ کھڑی دعاؤں کا ورد کرتی سوچ رہی ہو گی کہ اتنی رات ہو گئی، پتہ نہیں بیٹا گھر بھی پہنچا ہو گا یا نہیں، خدا خیر کرے!  پھولوں جیسے کتنے ہی معصوم سورج سے بھی پہلے تلاشِ رزق میں نکلیں گے اور رات کو تھکے ہارے ہاتھوں کا تکیہ بنائے خواب آنکھوں میں لئے سو جائیں گے!

کیا یہ انتظار، انتظارِ لاحاصل ہی رہے گا؟ آئیے! اس عید پر ہمارا ساتھ دیجیے کہ کہیں یہ عید بھی بوڑھی آنکھوں میں انتظار اور احساسِ محرومی کے مزید نئے کانٹے نہ چبھو جائے۔ اگر یہ آنکھیں بے نور ہو گئیں تو ہم کیسے دیکھیں گے! یہ لب خاموش ہو گئے تو ہمارے لئے دعائیں کون مانگے گا! یہ پھول مرجھا گئے تو کہیں باغبان ہم سے ناراض نہ ہو جائے! اگر یہ کلیاں تعلیم اور اپنائیت سے محروم رہیں تو کہیں کمھلا نہ جائیں! کہیں ہم منزل پہ پہنچ کے بھی بے آسرا، بے سر و سامان ہی نہ ٹھہریں!

عید سب کے لئے --- پازیٹیو پاکستان
آئیے! اولڈ ہومز میں اپنے پیاروں کے لئے متلاشی آنکھوں کے ساتھ عید منائیے۔ آئیے! کتابوں کی بجائے ہاتھوں میں اوزار تھامے پھولوں کے ساتھ عید منائیے۔ آئیے! موسم ہو یاکوئی تہوار، کسی چیز کی پرواہ نہ کرتے ہوئے ہماری خاطر اپنا وقت سڑکوں پہ گزارنے والے ٹریفک وارڈنز اور سیکیورٹی گارڈز کے ساتھ عید منائیے  کہ رشتے صرف خون کے ہی تو نہیں ہوتے۔ بعض اوقات دل کے رشتے خون کے رشتوں سے کہیں زیادہ سَچے اور سُچے ہوتے ہیں۔

اولڈ ہومز میں بسے محبت کے ان فرشتوں کو آپ کے روپے پیسے کی خواہش نہیں، سکول کی بجائے دکانوں پہ جانے والے بچے آپ کی جائیداد میں حصہ نہیں مانگتے، سڑکوں پہ اپنے فرائض انجام دیتے اہلکاروں کو آپ سے کسی صلے کی تمنا نہیں کہ انہیں صرف آپ کے وقت کی ضرورت ہے اور ہم اتنا تو کر ہی سکتے ہیں۔ وہ بناوٹ سے عاری ہیں، دستار کا بوسہ لینا نہیں جانتے، ان کی دعائیں آپ کی پیشانی کا بوسہ لیتی ہیں۔ آپ کے نام سے، آپ کے لئے ان کی آنکھیں وضو کرتی ہیں۔ ان کے شب و روز آپ کی زکوٰۃ ادا کرتے ہیں۔ آئیے! ان کے ساتھ عید منائیں اور انہیں یقین دلائیں کہ "ہم زندہ قوم ہیں، پائندہ قوم ہیں"۔

تمام عمر سلامت رہیں، دعا ہے یہی
ہمارے سر پہ ہیں جو ہاتھ برکتوں والے
 (محمد بلال اعظم)




عابد کی سال گرہ کا احوال

یوں تو کالج میں کئی بار گرم لُو کے تھپیڑے کھائے اور بارہا بارش کی بوندوں کو کوریڈور میں، الیکٹرانکس لیب کی کھڑکی کے پاس، کبھی روز گارڈن میں، کبھی سنکنگ گارڈن میں کچھ حسین دوستوں کی پُر لطف قربت میں محسوس کیا مگر جو مزہ 27 جون کی بارش میں بھیگنے کا آیا، دل اُس سے پہلے نا آشنا تھا۔

بارش کی ایک ہی منزل ہے۔۔۔ دل کی لائبریری۔۔۔ کاغذ کی کشتی، بارش کا پانی۔۔۔من آنگن میں۔۔۔  وہ ہنستے ہنستے رونے لگتی تھی، دھوپ میں بارش ہونے لگتی تھی۔۔۔ ایسے میں کچھ دکھ بھی خودرو پودوں کی طرح باہر آ جاتے مگر یہ اداسی بھی تو دل مندر کی داسی ہے۔۔۔ لطیف اور حسین۔۔۔ بارش صرف یادوں میں ہی نہیں، کھانے پینے کی چیزوں اور خیالوں میں بھی برکت ڈال دیتی ہے۔۔۔ خیال، جن کی رفتار بارش کی بوندوں کو بھی مات دے دے۔ یہ بارش بھی تو سرما کی چاندنی جیسی ہے کہ خوابوں کو مزید اُجلا کر دیتی ہے۔ کتنے ہی آفاق دوستوں کے ساتھ گزری یادوں کے حیرت کدہ میں گم ہو جاتے ہیں! دل کے شہرِ پُر فن میں احبابِ دل نگار موجود ہوں تو بارش کی بوندیں خیال و فکر کی تجسیم و تخلیق کا لمحہ عطا کرتی ہیں اور اگر ان میں کسی ایک کے لئے کوئی لمحہ خاص ہو تو وہی بوندیں متاعِ یقین کے اسباب مہیا کرتی ہیں، رم جھم ایسا احساس مہیا کرتی ہے جیسے پانی میں محبت کا امرت گھلا ہوا اور تقدیس و محبت کے تمام "عابد" و "شاہد" فرشتے اس منظر کی گواہی دینے خود آئے ہوئے ہوں۔


بچپن سے سنتے آئے ہیں
اے ابرِ کرم آج اتنا برس۔۔۔۔ کہ وہ جا نہ سکیں
جبکہ ستائیس جون کی رات اس قدر اثر انگیز و حیرت ناک تھی کہ دل نے بے ساختہ صدا دی
اے ابرِ کرم آج اتنا برس۔۔۔ کہ "ہم" جا نہ سکیں


جہاں رونقِ محفل عابد و شاہد ہوں، محفلِ دوستاں کو منور کریں استادِ مَن مطیع الرحمان، یارِ دلآویز و مونسِ جاں عثمان بھائی، ارشد ، ضرغام اور عدنان ہوں وہاں مجھ تشنہ لباں سمیت سب ہی آسمانِ ہنر کے اُس پار "شفیق چہروں کی صبیح آنکھوں سے پھوٹتی دعاؤں کے کہر" محسوس کر رہے تھے۔ پہلے دماغ مصر رہا کہ سپورٹس آفس میں بیٹھا جائے مگر وہ دل ہی کیا جو بارش کی بوندوں اور تیز ہوا کو دیکھ کے مچل نہ جائے۔۔۔ یادگار سوئمنگ پول کے باہر کرسیاں لگائی گئیں تو سفیرانِ محبت کو دیکھ کر ہوا نے بھی اپنا رخ بدل لیا اور لگی لطیف روح کی کثیف سوچوں کو شفاف کرنے۔۔۔ بوندوں کی ہمرہی میں کیک کاٹا گیا اور روایتِ دوستاں کے منکر نہ ٹھہریں، اس لئے اسی کیک سے محفل کے دولہا کا چہرہ "کیک و کیک" کیا۔۔۔ اس کارِ خیر میں سب نے کارِ ثواب کی نیت سے حصہ لیا۔


کسی نے کہا تھا
کل ہلکی ہلکی بارش تھی
کل تیز ہوا کا رقص بھی تھا

ہوا رقص کرے، پتوں کی پازیب بجے تو کس کافر کا دل مانے گا خاموش رہنے کو۔۔۔ ہتھیلیوں کی تھاپ پہ شروع ہونے والا سفر دل کی لَے پر یادوں کے سُر سنگیت کے ساتھ لفظوں کی "انتاکشری" کا ہم رکاب ہوا۔جب ہر لہر کے پاؤں سے گھنگھرو لپٹے اور بارش کی ہنسی نے تال پہ پازیب چھنکائے تو بخدا درختوں پہ ستارے اتر آئے۔  المختصر یہ کہ رقص کیا اور کبھی شور مچایا۔۔۔ ہم تھے اور ہمارا "پاگل پن" تھا۔۔۔ خیر وقت کو گزرنا، وہ وقت بھی گزر گیا لیکن جاتے جاتے ہمیں کئی حسین یادیں دے گیا۔۔۔


مگر ان یادوں میں خلش رہی کہ سر عمران کا ساتھ میسر نہ آیا۔۔۔ عمران صاحب یاد آئے، دل ماضی کے سفر پر نکل گیا اور دور کہیں سے ذہن میں جھماکا اور ہاتھ جھلمل جھلمل کرتے برقی کی بورڈ پہ چلنے لگے۔۔۔ استادِ مہربان کے لئے خاکسار کا ایک شعر
کتنا یاد آتے ہیں
بارش، چائے اور تم


 اگلے برس بھی ستائیس جون آئے گی،  ہم نجانے کہاں ہوں گے مگر یہ یادیں اُس روز بھی یہ موسم، یہ محفل یاد دلائیں گی۔۔۔ جیسے پچھلی سترہ جون کو ہم کامسیٹس میں تھے، کالج میں سائیکل اسٹینڈ کے باہر کیک کاٹا اور اِس بار عثمان بھائی کے گھر۔۔۔ جیسے اس بار میں اور عثمان بھائی پچھلی سالگرہ کی یادوں کو تازہ کرتے رہے، اگلے سال یقیناً ہم سب کریں گے مگر اس امید کے ساتھ کہ یہ محفلیں کبھی ختم نہیں ہوں گی، محبتوں کو نہ کبھی زوال آیا نہ آئے گا۔۔۔ہسٹری سوسائٹی کی اس غیر رسمی ملاقات کے  اختتام پہ بشیر بدر یاد آ گئے

کبھی برسات میں شاداب بیلیں سوکھ جاتی ہیں
ہرے پیڑوں کے گرنے کا کوئی موسم نہیں ہوتا
بہت سے لوگ دل کو اس طرح محفوظ رکھتے ہیں
کوئی بارش ہو یہ کاغذ ذرا بھی نم نہیں ہوتا











 (محمد بلال اعظم)

آؤ مل کر قدرت کے راز کھوجیں!۔۔۔۔ تجسس سائنس فورم۔۔۔۔ تعارف (دوسرا حصہ)


تجسس سائنس فورم کے تعارف کا پہلا حصہ تیزابیت پہ پڑھا جا سکتا ہے۔

آج کے دور میں ملکی و غیر ملکی زبانوں میں تعلیمی ویب سائٹس کسی بھی ملک کی تعلیمی روایات کا ایک اہم حصہ گردانا جاتا ہے اور یہ ویب سائٹس کسی بھی ملک میں سائنس کی ترویج میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔علاوہ ازیں یہ طلباوطالبات کی شخصی،ذہنی،علمی و عملی اور تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے میں اہم کردار ادا کرتی ہیں۔
سائنس ایک مشکل مگر دلچسپ مضمون کے طور پر جانا جاتا ہے اور اسکی افادیت سے دنیا بخوبی واقف ہے۔مگر طلباوطالبات اس مضمون کے بارے علم تو رکھتے ہیں مگر سمجھ نہیں رکھتے اور یہ عدم توجہی کی وجہ سے ہے۔ شاید کہ طلبا اس مضمون کو بس ایک مضمون سمجھ کر پڑھتے ہیں، اس میں دلچسپی نہیں رکھتے۔ اس کی ایک بڑی وجہ یہ بھی ہے کہ پاکستان میں اکثریت اردو زبان سے وابستہ ہے، انگریزی کو سرکاری اور دفتری زبان کی حیثیت حاصل ہونے کے باوجود طلبا کی اکثریت اردو میڈیم سے وابستہ ہے۔ تجسس سائنس فورم کا مقصد اردو زبان میں سائنس کی ترویج و اشاعت ہے۔
پاکستان میں سائنس کی ترویج و اوشاعت اور ترقی کے لئے بہت لوگ کوشاں رہے اور اس شعبہ نے بہت سے صاحبِ علم پیدا کئے۔ جنہوں نے ملکی سطح پر اور شہری سطح پر اپنی خدمات سر انجام دیں اور ابھی تک یہ سلسلہ برقرار ہے اور انشاءاللہ یونہی برقرار رہےگا۔ ڈاکٹر عبدالسلام، ڈاکٹر عبدالقدیر خان، ڈاکٹر ثمر مبارک مند، ڈاکٹر عطاءالرحمان اس کی روشن مثال ہیں۔
سائنس ایک بہت وسیع شعبہ ہے اور اسکو سمجھنے کے لئے دلچسپی اور وقت درکار ہے۔ ویب سائٹ کے زیرِتحت سائنس سے تعلق رکھنے والے تمام طلبا و طالبات اپنے نظریات کو بہتر بنا سکتے ہیں اور اپنے تخلیقی کام کو متعارف بھی کروا سکتے ہیں۔ سائنس دن بدن ترقی میں مصروف ہے مگر ہمارا تعلیمی نظام کچھ ایسا ہے کہ سال ہا سال وہی پرانا نصاب پڑھایا جاتا رہا اور یہ نصاب بھی سائنس کے شعبہ کے کچھ درخشندہ ستاروں کی مرہونِ منّت ہے۔ سائنس میں روزانہ کی بنیاد پہ نئی چیزیں اور نظریات دریافت ہو رہے ہیں مگر ہمارے طلبا و طالبات اس سب سے بے خبر ہیں اورہمارے ہاں ان سب باتوں سے آگاہی کا فقدان ہے حالانکہ طلبا کا ان سب باتوں سے با خبر رہنا وقت کی ضرورت ہے۔لہذا تجسس سائنس فورم اس بات کی کمی کو دور کرنے میں ہمیشہ سے کوشاں رہی ہے اور انشاءاللہ رہے گی۔


ہمارے مقاصد: 
یوں تو تجسس سائنس فورم کے اغراض و مقاصد بہت ہیں مگر مختصراً کچھ کا ذکر درج ذیل ہے:
1)           سائنس سے متعلقہ مسائل کے حل میں طلبا کی مدد
2)           نئی ایجادات و دریافت سے آگاہی اور سائنس کی دنیا کے عظیم ناموں کے بارے میں اردو زبان میں لکھنا
3)           فورم کے ممبران میں سائنسی و تخلیقی صلاحیتوں کو اجاگر کرنے کے لئے ماہانہ بنیادوں پہ مقابلہ جات کا انعقاد
4)           طلبا کو اس قابل بنانا کہ وہ دوسرے ممالک اور ملکی سطح پر دوسرے اداروں کے طلبا کا سامنا کر سکیں
5)           مختلف موضوعات پر مختلف شعبہ جات کے اساتذہ کی جانب انکی تاریخ اور نظریات میں ترقی پر مبنی لیکچرز کا انعقاد
6)            سائنس سے متعلقہ مطالعاتی دوروں کا انعقاد
7)           سائنس کے بارے میں طلبا میں دل چسپی پیدا کرنا
8)           طلبا کو انکے روشن مستقبل کے مواقع کے بارے آگاہ کرنا                  
9)            طلبا کو سائنسی نمونہ جات بنانے کی طرف راغب کرنا اور انکی حوصلہ افزائی
10)         چھوٹی جماعتوں کے طلبا کو
سائنس کی افادیت اور اس مضمون سے آگاہ کرنا،اور اساتذہ کی تعلیمی زندگی کا تعارف انکے سامنے رکھنا                       تا کہ وہ انہیں اپنے لئے مثال سمجھیں۔
11)        ایک سائنسی جریدے کی اشاعت کی کوشش کرنا

               لیکن ہمیں ان سب مقاصد کو حاصل کرنے کے لئے بہترین افرادی قوت کی ضرورت ہے کیونکہ یہ کام صرف دو چار لوگوں کا نہیں بلکہ ایک پوری ٹیم کا ہے۔ مگر ہمیں امید ہے کہ اس سفر میں ہم تنہا نہ ہوں گے، آہستہ آہستہ ہم ایک قافلہ کی شکل اختیار کر لیں گے۔ آئیے ہمارا ساتھ دیجیے، تجسس سائنس فورم کے رکن بنیں اور پاکستان میں سائنس کے حوالے سے ایک نئے باب کا در وا کرنے میں ہماری کوشش کا حصہ بنیں۔

میرے کمرے میں کہیں رات پڑی ہو جیسے


میرے کمرے میں کہیں رات پڑی ہو جیسے
سرمئی شام اسے ڈھونڈ رہی ہو جیسے

خواب تو جل کے دھواں کب کا ہوا ہے لیکن
 ایک چنگاری کہیں اب بھی دبی ہو جیسے

ایک گزرے ہوئے لمحے میں پڑا ہوں کب سے
 زندگی رکھ کے مجھے بھول گئی ہو جیسے

ہاتھ میں ہاتھ مگر پھر بھی یہ لگتا ہے مجھے
 تُو بہت دور بہت دور کھڑی ہو جیسے

اشک پلکوں کے کناروں سے  اُمڈ آئے ہیں
 میری آنکھوں سے کوئی بھول ہوئی ہو جیسے

چلتے چلتے ہوئے اکثر میں ٹھٹھک جاتا ہوں
 میں نے پھر سے وہی آواز سُنی ہو جیسے

(اسد قریشی)

عشق کا نام تو آزار بھی ہو سکتا تھا


عشق کا نام تو آزار بھی ہو سکتا تھا
ہجر سہنا کبھی بیکار بھی ہو سکتا تھا

جرم کی آگ میں جھلسا ہے جو معصوم سا پل
 اگلے وقتوں کا یہ معمار بھی ہوسکتا تھا

 برف نے ڈھانپ رکھا ہے جسے اب تک سوچو
آتشِ قہر کا کوہسار بھی ہو سکتا تھا

ہے عجب رزق کی تقسیم، تو ترسیل عجب
جو ہے محدود و بسیار بھی ہو سکتا تھا

 یوں تو دنیا نے دیئے غم ہیں بہت سے مجھ کو
ورنہ غم تیرا گراں بار بھی ہوسکتا تھا

خیر ہو قیس کی صحرا کو بنایا مسکن
دلِ وحشی تھا یہ خونخوار بھی ہو سکتا تھا

شمع جل کر بھی نہ جل پائی، مگر پروانہ
عشق میں تھوڑا سمجھدار بھی ہوسکتا تھا

میں نے چاہا نہ کبھی خود کو نمایاں کرنا
میرے قدموں میں یہ سنسار بھی ہوسکتا تھا

 وہ تو اچھا ہے کہ سمجھا نہ زمانہ مجھ کو
 ورنہ منصور، سرِ دار بھی ہوسکتا تھا

تجھ پہ سایا ہے تری ماں کی دعاؤں کا اسدؔ
شکر کر راندہِ دربار بھی ہوسکتا تھا

(اسد قریشی)

اس عالمِ حیرت و عبرت میں کچھ بھی تو سراب نہیں ہوتا


اس عالمِ حیرت و عبرت میں کچھ بھی تو سراب نہیں ہوتا
کوئی پسند مثال نہیں بنتی، کوئی لمحہ خواب نہیں ہوتا


اک عمر نمو کی خواہش میں موسم کے جبر سہے تو کھُلا
ہر خوشبو عام نہیں ہوتی، ہر پھول گلاب نہیں ہوتا




اس لمحۂ خیر و شر میں کہیں اک ساعت ایسی ہے جس میں
ہر بات گناہ نہیں ہوتی، سب کارِ ثواب نہیں ہوتا

میرے چاروں طرف آوازیں اور دیواریں پھیل گئیں لیکن
کب تیری یاد نہیں آتی اور جی بیتاب نہیں ہوتا

یہاں منظر سے پس منظر تک حیرانی ہی حیرانی ہے
کبھی اصل کا بھید نہیں کھلتا، کبھی سچا خواب نہیں ہوتا

کبھی عشق کرو اور پھر دیکھو، اس آگ میں جلتے رہنے سے
کبھی دل پر آنچ نہیں آتی، کبھی رنگ خراب نہیں ہوتا

میری باتیں جیون سپنوں کی، میرے شعر امانت نسلوں کی
میں شاہ کے گیت نہیں گاتا، مجھ سے آداب نہیں ہوتا


(سلیم کوثر)

شئیر کیجیے

Ads 468x60px