میرؔ کی عظمت کا اعتراف اساتذہ کی زبان سے

میرؔ کی عظمت کا اعتراف اساتذہ کی زبان سے:

سوداؔ:
مرزا سوداؔ جو میرؔ صاحب کے ہمعصر اور مدِّ مقابل تھے، کہتے ہیں
سوداؔ تو اس غزل کو غزل در غزل ہی لکھ
ہونا ہے تجھ کو میرؔ سے استاد کی طرح

ناسخ:
شیخ ناسخؔ جو اپنی تنک مزاجی اور بد دماغی کے لئے مشہور ہیں، کہتے ہیں
شبہ ناسخؔ نہیں کچھ میرؔ کی استادی میں
آپ بے بہرہ ہے جو معتقدِ میرؔ نہیں
اس کے لئے ناسخؔ نے میرؔ کی تاریخِ وفات کہی:
"واویلا مرد شۂِ شاعراں"
اس میں بھی انہوں نے میرؔ کی عظمت کا اعتراف "شہ شاعراں" کہہ کر کیا ہے۔

غالبؔ:
مرزا غالبؔ ناسخؔ کی اس رائے کی تائید کرتے ہوئے کہتے ہیں
غالبؔ اپنا یہ عقیدہ ہے بقول ناسخؔ
آپ بے بہرہ ہے جو معتقدِ میرؔ نہیں
مرزا غالبؔ دوسری جگہ میرؔ کی عظمت کا اعتراف کرتے ہوئے کہتے ہیں
میرؔ کے شعر کا احوال کہوں کیا غالبؔ
جس کا دیوان کم از گلشن کشمیر نہیں

ذوقؔ:
استاد ذوقؔ فرماتے ہیں
نہ ہوا، پر نہ ہوا، میرؔ کا انداز نصیب
ذوقؔ یاروں نے بہت زور غزل میں مارا

مصحفیؔ:
اے مصحفیؔ تو اور کہاں شعر کا دعوےٰ
پھبتا ہے یہ اندازِ سخن میرؔ کے منہ پر

شیفتہؔ:
نرالی سب سے ہے اپنی روش اے شیفتہؔ لیکن
کبھی دل میں ہو ائے شیوہ ہائے میرؔ پھرتی ہے

میر مہدی مجروحؔ:
یوں تو ہیں مجروحؔ شاعر سب فصیح
میرؔ کی پر خوش بیانی اور ہے

مولانا حالیؔ:
حالیؔ سخن میں شیفتہؔ سے مستفید ہے
غالبؔ کا معتقد ہے، مقلد ہے میرؔ کا

مرزا داغؔ:
میرؔ کا رنگ برتنا نہیں آساں اے داغؔ
اپنے دیواں سے ملا دیکھیے دیواں ان کا

امیرؔ:
سوداؔ و میرؔ دونوں ہی استاد ہیں امیرؔ
لیکن ہے فرق آہ میں اور واہ واہ میں

جلال لکھنویؔ:
کہنے کو جلال آپ بھی کہتے ہیں وہی طرز
لیکن سخنِ میر تقی میرؔ کی کیا بات ہے

اسمٰعیل میرٹھی:
یہ سچ ہے کہ سوداؔ بھی تھا استاد زمانہ
مِیری تو مگر میرؔ ہی تھا شعر کے فن میں


اکبرؔ الہ آبادی:
میں ہوں کیا چیز جو اس طرز پہ جاؤں اکبرؔ
ناسخؔ و ذوقؔ بھی جب چل نہ سکے میرؔ کے ساتھ

مولانا حسرتؔ موہانی:
گذرے ہیں بہت استاد، مگر رنگ اثر میں
بے مثل ہے حسرتؔ سخن میرؔ ابھی تک

شعر میرے بھی ہیں پُر درد، ولیکن حسرتؔ
میرؔ کا شیوۂ گفتار کہاں سے لاؤں

احمد فرازؔ:
فرازؔ شہرِ غزل میں قدم سلوک سے رکھنا
کہ اِس میں میرؔ سا، غالبؔ سا خوش نوا بھی ہے


انتخاب: اردو شاعری پر ایک نظر از محمد جمیل احمد 
اور کچھ میرا ذاتی انتخاب بھی ہے۔ 

نوٹ: یہ مائیکرو سافٹ کا urdu typsetting فونٹ ہے۔

1 Response to "میرؔ کی عظمت کا اعتراف اساتذہ کی زبان سے"

درویش خُراسانی said... Best Blogger Tips[کمنٹ کا جواب دیں]Best Blogger Templates

آپکی پوسٹ پڑھتے وقت ایسا لگ رہا تھا کہ ان بزرگوں کی مجلس میں بیٹھا ہوں۔
بہت لطف اندوز ہوا۔

Post a Comment

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


شئیر کیجیے

Ads 468x60px