میرا نظریۂ شعر از اختر شیرانی


میرا نظریۂ شعر از اختر شیرانی


                 ۔۔۔ میں نے جب شعر کہنا شروع کیا تو شاعری کے افادی مقاصد کا وہ تصور کہیں موجود نہ تھا جسے آج ترقی پسندی کے نام سے یاد کیا جاتا ہے۔ میرے دیکھتے ہی دیکھتے اس تصور نے کافی فروغ پا لیا۔۔۔ شاعر کا کام زندگی کے حسن کو خود دیکھنا اور دوسروں کو دکھانا ہے۔ زندگی کے ناسوروں کے علاج کی کوشش کرنا اس کا کام نہیں۔
            ۔۔۔ اس میں شک نہیں کہ موجودہ زمانے نے بعض ایسے نا گزیر مسئلے میرے سامنے لا رکھے ہیں جن سے گریز ممکن ہے نہ مصالحت۔ سیاست میں آواز اور خیالات کا اثر بڑھ گیا ہے، اقتصادی کش مکش ہمہ گیرہوتی جا رہی ہے، تجارتی لوٹ کھسوٹ کی گرم بازاری نے سماج کے ہر ایک طبقے کو اپنی لپیٹ میں لے لیا ہے اور بے شمار ملک اور گروہ ہماری دنیا کے خوبصورت جسم کے بڑے بڑے ناسور بن کر رہ گئے ہیں۔ ہم شاعر بھی انسان ہونے کی حیثیت سے ان اثرات کی طرف سے آنکھیں بند نہیں کر سکتے لیکن ہمارا ان ناسوروں کی جراحی کر کے انہیں ٹھیک کرنے کی کوشش کرنا ایک اناڑی کی کوشش سے زیادہ نہ ہو گا۔ ان کا علاج تو سیاسی اور اقتصادی ماہروں کے ہاتھ میں ہے اور انہی پر علاج کا فرض بھی عائد ہوتا ہے۔۔۔
            ۔۔۔ شاعری افراد اور اقوام کے لئے ایک لطیف غذا تو بن سکتی ہے جو ان کے ذائقے کی تشفی کرے اور اس کی عمدگی کو برقرار رکھےلیکن اس سے بیمار اور بوڑھی قوموں کے حق میں 'معجونِ شباب آور' کا کام لینا میرے نزدیک بہت بڑی زیادتی ہے۔ ترقی پسندی کی تحریک کو جس قدر بھی فروغ اب تک حاصل ہوا ہے اس کا باعث اس کے بنیادی تصور کی دلکشی نہیں بلکہ اس کے لیبل کی دلکشی ہے۔ اس کے لیبل کو دیکھ کر ذہن سب سے پہلے ترقی پسندوں کے پھیلائے ہوئے جال میں پھنس جاتے ہیں۔۔۔
            ۔۔۔ میرے نزدیک شاعر کے لئے اپنے آپ کو کسی سیاسی یا اقتصادی نظام سے وابستہ کرنا ضروری نہیں۔ وہ نظام سرمایہ داری ہو یا اشتراکیت، جمہوریت ہو یا فاشیت، شاعر کے لئے ان میں سے ایک بھی قابلِ توجہ نہیں۔ شاعر کی قدریں ان سب سے الگ اور آزاد ہیں۔
                    (1942ء کی ایک ریڈیائی تقریر سے)
شاعر: اختر شیرانی
ماخذ: کلیاتِ اختر شیرانی
مُرتّبہ: گوپال متّل
ناشر: موڈرن پبلشنگ ہاؤس (9 گولا مارکیٹ دریا گنج نئی دھلی)

1 Response to "میرا نظریۂ شعر از اختر شیرانی "

raheem baloch said... Best Blogger Tips[کمنٹ کا جواب دیں]Best Blogger Templates

salam bilal bhai. Main apki blogs hamesha visit karta rehta hon.. Aur ap ki shayari b main apne blog men post karta hon.. You are a good urdu blogger.. Raheem sagar baloch

Post a Comment

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


شئیر کیجیے

Ads 468x60px