لوگ ٹوٹ جاتے ہیں ایک گھر بنانے میں


غزل
لوگ ٹوٹ جاتے ہیں ایک گھر بنانے میں
تم ترس نہیں کھاتے بستیاں جلانے میں


اور جام ٹوٹیں گے اس شراب خانے میں
موسموں کے آنے میں، موسموں کے جانے میں


ہر دھڑکتے پتھر کو لوگ دل سمجھتے ہیں
عمریں بیت جاتی ہیں دل کو دل بنانے میں


فاختہ کی مجبوری یہ بھی کہہ نہیں سکتی
کون سانپ رکھتا ہے اس کے آشیانے میں


دوسری کوئی لڑکی زندگی میں آئے گی
کتنی دیر لگتی ہے اس کو بھول جانے میں
(بشیر بدر)
(آسمان)

1 Response to "لوگ ٹوٹ جاتے ہیں ایک گھر بنانے میں"

Sahzad raza said... Best Blogger Tips[کمنٹ کا جواب دیں]Best Blogger Templates

nice your site thanks for sharing love you all teme good work keep it up
Facebook Hacking Softwares

Post a Comment

اردو میں تبصرہ پوسٹ کرنے کے لیے ذیل کے اردو ایڈیٹر میں تبصرہ لکھ کر اسے تبصروں کے خانے میں کاپی پیسٹ کر دیں۔


شئیر کیجیے

Ads 468x60px